صرف وضاحت؟

اللہ جانے کیا ہونے والا ہے اور پاکستان کا کیا بننے والا ہے۔ جس ادارے کے متعلق پوری پاکستان کی قوم  اپنے دل میں انتہائی عزت و احترام رکھتی ہے اسی ادارے کی جانب سے ایک تسلسل کے ساتھ دل دکھادینے والی خبروں کا ملنا باعث تشویش اور دل دکھانے والی باتوں کو سامنے آنا ہر پاکستانی کیلئے لمحہ فکریہ ہے۔

پاکستانی فوج کا کہنا ہے کہ پاکستان کی خفیہ سروس آئی ایس آئی کے سابق سربراہ جنرل اسد درانی کو را کے سابق سربراہ کے ساتھ مل کر کتاب لکھنے کی وضاحت کے لیے جی ایچ کیو طلب کیا گیا ہے۔

ایک تو ہر معاملے میں ہمارے اداروں کا دہرامعیار ہی آزار جان ہے اور دوسرے یہ کہ کارروائی اس وقت عمل میں لائی جاتی ہے جب پانی پلوں پر سے بھی گزرجاتا ہے، یہ بات تمام باتوں سے کہیں زیادہ قابل تشویش اور باعث خجالت ہے۔ یہ بات بھی قابل مواخذہ ہے کہ اسی قسم کی کوئی ذرہ برابرغلطی کسی سویلین سے سرزد ہوجائے تو پھر اس کے پاؤں زمین و آسمان کے درمیان لٹکانے میں لمحہ بھی نہیں لگا کرتا۔ یہی وہ دہرا رویہ و معیار ہے جس کو ہر سطح پر ختم ہوجانا چاہیے۔

ایک ایسی کتاب جو پاکستان کے حساس ادارے کے سب سے بڑے عہدے پر فائز (ر) جنرل اسد درانی نے لکھی ہو اور وہ بھی پاکستان کے سب سے بڑے دشمن “را” کے ریٹائرڈ سربراہ “اے ایس دولت” کے ساتھ مل کر تو پھر کوئی یہ بتائے کہ درمیان میں راز کے پردے کا کیا کوئی ایک تار بھی سلامت رہ جانے کا اعتبار کیا جا سکتا ہے؟۔ کیا دونوں سربراہوں کی ملاقاتیں کم قیامت تھیں کہ اس کے بعد کتاب کا بھی سامنے آجانا اور پھر ستم بالائے ستم یہ کہ اس مشترکہ کتاب کی افتتاحی تقریب کا بھارت ہی میں منعقد ہونا، کیا اور بھی کوئی کسر رہ جاتی ہے ملک کے ساتھ مذاق کی کہ ایسے فرد کو جی ایچ کیو محض اس لئے طلب کیا جائے کہ وہ اس مشترکہ پیشکش کی صرف “وضاحت” پیش کرے۔

کتاب تو ابھی کوئی ہفتہ دس دن قبل شائع ہوئی ہے لیکن ایک بات جو بہت ہی قابل غوروفکر ہے وہ یہ ہے کہ کیا یہ بات کم لائق سزا نہیں کہ پاکستان کے نہایت حساس ادارے آئی ایس آئی کا سابق سربراہ دشمن ملک کے ادارے “را” کے سابق سربراہ کے ساتھ ملاقاتیں کرے اور وہ بھی ایک دو نہیں متعدد ملاقاتیں اور پھر پاکستان اور بھارت تک ہی ان ملاقاتوں کا سلسلہ محدود نہ رہا ہو بلکہ یہ ملاقاتیں دنیا کے دیگر ممالک میں بھی ہوتی رہی ہوں اور ان ملاقاتوں میں کئی کئی ہفتے صرف کئے گئے ہوں لیکن ان ساری سر گرمیوں کا پاکستان کی سب سے اور دنیا کی مانی ہوئی ایجنسی کو علم ہی نہ ہو سکاہو۔ کون نہیں جانتا کہ اتنے اہم عہدے پر متمکن کوئی بھی فرد خواہ اس کا تعلق دنیا کےکسی بھی ملک سے ہو اس کے سینے میں اپنے ملک کے کتنے راز پوشیدہ ہوتے ہونگے۔ ایسے فرد کا کسی دوسرے ملک کے سربراہ سے ملنا اور وہ بھی دشمن ملک کے ساتھ کئی کئی راتیں گزار نا بجائے خود ایک قابل گرفت بات ہے۔ کیا یہ تسلیم کرلیا جائے کہ ان ساری ملاقاتوں سے ہمارا خفیہ کا سب سے بڑا ادارہ بالکل ہی بے خبر رہا ہوگا؟۔ اگر واقعی بے خبر رہا ہے تو تب بھی یہ ایک بہت بڑی اور بری خبر ہے اور اگر سب کچھ جانتے ہوئے بھی کتاب کی اشاعت اور تشہیر سے قبل کسی بھی قسم کا رد عمل سامنے نہ آنا (خدا نخواستہ) اس بات کا اشارہ ہے کہ صرف اسد درانی ہی قصور وار نہیں بلکہ محکمانہ غفلت اور بے خبری پر بھی غور و فکر کی ضرورت ہے۔ اب بھی اگرانھیں جی ایچ کیو طلب کیا جارہا ہے اور وہ بھی محض”وضاحت” کیلئے تو ہر عام و خاص کیلئے یہ طلبی تشنہ لبی کے علاوہ اور کچھ نہیں۔

اس بات کو یوں سمجھیں جیسے میں پاکستان کی دوتین بڑی جماعتوں میں سے کسی ایک کا سربراہ ہوں۔ کیا پاکستان کے ادارے اس بات کو گوارہ کریں گے کہ میں بھارت کی خفیہ ایجنسی را کے کسی سابق سربراہ کے ساتھ ملکوں ملکوں گھوموں اور راتیں کالی کروں؟۔ جبکہ میرے پاس کسی بھی حساس نوعیت کی کوئی ایک راز کی بات بھی نہ ہو؟۔ کسی پارٹی کا لیڈر ہونے کے ناطے میری ایسی کسی بھی ملاقات کو نہ تو برداشت کیا جائے گا اور نہ ہی برداشت کیا جانا چاہیے۔ جب ایک عام رہنما کی ملاقاتیں ملک کی سلامتی کیلئے خطرہ بن سکتی ہیں تو پھر سابق سربراہ کی ملاقاتوں کا سخت نوٹس کیوں نہ لیا گیا؟، یہ بات از خود “وضاحت” طلب معاملہ ہے جس کا تشفی بخشص جواب ضرور آنا چاہیے۔

فوج کے شعبۂ تعلقات عامہ کے ترجمان میجر جنرل آصف غفور کی جانب سے کی گئی ٹویٹ میں کہا گیا ہے کہ جنرل ریٹائرڈ اسد درانی 28 مئی کو جی ایچ کیو میں طلب کیے گئے ہیں۔

بیان کے مطابق اسد درانی خود سے وابستہ ان بیانات کی وضاحت پیش کریں جن کے مطابق انھوں نے انڈین ایجنسی را کے سابق سربراہ کے ساتھ مل کر ‘سپائی کرونکلز: را، آئی ایس آئی اینڈ دی الوژن آف پیس’ نامی کتاب لکھی ہے۔

بیان میں مزید کہا گیا کہ ’اس عمل کو فوجی ضابطۂ کار کی خلاف ورزی کے طور پر لیا گیا ہے جس کا اطلاق حاضر سروس اور ریٹائرڈ تمام فوجی اہلکاروں پر ہوتا ہے۔‘

اس سے پہلے انڈیا کے خفیہ ادارے ‘را’ کے سابق سربراہ اے ایس دُلت نے انڈیا کے ایک سرکردہ ٹی وی چینل این ڈی ٹی وی پر انٹر ویو میں بتایا تھا کہ انھوں نے اور پاکستان کی خفیہ سروس کے سابق سربراہ جنرل اسد درانی نے انڈیا اور پاکستان کی صورتحال کے پس منظر میں مشترکہ طور پر ایک کتاب لکھی ہے جس کا عنوان ‘سپائی کرونکلز: را، آئی ایس آئی اینڈ دی الوژن آف پیس’ ہے۔

ان کے مطابق دونوں سابقہ جاسوسوں نے کتاب کا بیشتر حصہ دبئی، استنبول اور کٹھمنڈو میں لکھا ہے۔

اے ایس دُلت کا کہنا ہے کہ دونوں ملکوں کی خفیہ ایجنسیوں کے سربراہ ایک مشترکہ کتاب لکھتے ہیں یہی ایک غیر معمولی بات ہے۔ انھوں نے کہا کہ امن مشکل ضرور ہے لیکن اسے حاصل کیا جا سکتا ہے۔

بھارت کی خفیہ ایجنسی را کے سابق سربراہ اے ایس دولت کا یہ کہنا کہ “امن مشکل ضرور ہے لیکن اس کو حاصل کیا جا سکتا ہے”، بولنے میں کتنا بھلا لگتا ہے لیکن کیا وہ اس بات کی وضاحت کر سکتے ہیں کہ بر صغیر کے اس پورے خطے میں اگر بد امنی اور بے چینی پائی جارہی ہے تو اس میں خود انکےاپنے ملک کا کتنا ہاتھ ہے؟۔ پاکستان کو دولخت کرنے میں کس کا کردار تھا۔ سری لنکا میں کس نے غدر مچا رکھا تھا۔ نیپال کس کی سازشوں میں گھرا ہوا ہے۔ افغانستان میں کون ہے جو بیٹھ کر افغانستان کی صورت حال کو اپنے مقاصد کیلئے استعمال کر رہا ہے۔ مقبوضہ بھارتی کشمیر میں روز بے گناہوں کے خون سے ہولی کون سا پیغام امن ہے۔ پاکستان میں اپنے ایجنٹوں کے ذریعے کون خلفشار مچانے کے درپے ہے۔ یہ وہ سوالات ہیں جن کا جواب ہر صورت میں ان سے طلب کیا جانا چاہیے۔ اس صورت حال کو سامنے رکھتے ہوئے ان کے منھ سے “امن” کی بات کچھ زیب نہیں دیتی۔ بقول جوش ملیح آبادی

اعدائے پیرویِ دین و ایماں اور تو

دیکھ اپنی کوہنیاں جن سے ٹپکتا ہے لہو

اس میں کوئی شک نہیں کہ امن کا حصول ناممکن نہیں لیکن اس کیلئے ضروری ہے کہ ان کا ملک (بھارت) خطے کےدوسرے ممالک میں مداخلت سے باز رہے۔ اگر مداخلت کا سلسلہ بند نہیں ہوا تو خود اس کیلئے بھی اس خطے میں سکون کے ساتھ رہنا ممکن نہ رہے گا۔

اس موقعہ پر ہم جی ایچ کیو سے بھی گزارش کریں گے کہ وہ سابق آئی ایس آئی کے سربراہ اسد درانی سے کتاب کے مندراجات کی جو وضاحت طلب کرنا چاہتے ہیں کریں لیکن ان کی بھارت کے خفیہ ایجنسی را کے سابق سربراہ سے ملاقاتوں پر بھی مواخذہ کریں اور ہر ریٹائرڈ آفیسر پر کڑی نظر رکھیں جو ریٹائرڈمنٹ کے بعد دشمن ملک کے کسی بھی عسکری آفیسر سے بالواسطہ یا بلا واسطہ رابطہ رکھتا ہو۔

حصہ
mm
حبیب الرحمن ایک کہنہ مشق قلم کار ہیں وہ بتول، اردو ڈائجسٹ، سرگزشت، سنڈے میگزین(جسارت)، جسارت اخبار میں "صریر خامہ" ٹائیٹل اور کچھ عرحہ پہلے تک "اخبار نو" میں "عکس نو" کے زیر عنوان کالم لکھتے رہے ہیں۔انہوں نے جامعہ کراچی سے سیاسیات میں ماسٹرز کیا ہے۔معالعہ اور شاعری کا شوق رکھتے ہیں۔

جواب چھوڑ دیں